Sign in to follow this  
  • entries
    447
  • comments
    2
  • views
    30,035

ہے عجیب و غریب رعنائی

Sign in to follow this  
WaQaS DaR

17 views

ہے عجیب و غریب رعنائی

ہے عجیب و غریب رعنائی
خود تماشا ہوں، خود تماشائی

ایک ہی موج کا تسلسل ہیں
تیری گیرائی، میری گہرائی

دوستا عشق سے بنا کے رکھ
کام آئے گی یہ شناسائی

میں تو ہنستا ہوں اس خرابے پر
تجھے کس بات پر ہنسی آئی

تم نہیں جانتے خدا کا حال
تم پہ بیتی نہیں ہے یکتائی

خود مجھے بھی قبول کرتی نہیں
میری خلوت پسند تنہائی

خود کو عورت کی آنکھ سے دیکھا
اور اک رمز کی سمجھ آئی

کتنی صوفی سرشت تھی وہ آگ
جو مجھے جسم سے اٹھا لائی

جانے کن منظروں کو روتی ہے
یہ غریب الدیار بینائی

صاحبو ایک تھا علی زریون
ویسا کافر نہ پھر ہوا بھائی

Click to View the full poetry article at (fundayforum.com)

Sign in to follow this  


0 Comments


Recommended Comments

There are no comments to display.

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now