Sign in to follow this  
  • entries
    438
  • comments
    2
  • views
    26,829

بازوؤں کی چھـتری تھی

بازوؤں کی چھـتری تھی بازوؤں کی چھـتری تھی راستوں کی بارش میں
بھیگ بھیگ جـــاتے تھے دھڑکنوں کی بارش میں

اور ہی زمـــــانہ تھا اور ہی تھے روز و شب
مجھ سےجب ملاتھا وہ چاہتوں کی بارش میں

بھیگتی ہوئی ســـــانسیں ، بھیگتے ہوۓ لمحے
دل گداز رم جھم تھی خوشبوؤں کی بارش میں

بجــــلیاں چمکتی تھیں ، کھــڑکیاں دھڑکتی تھیں
ایک چھت کے نیچے تھے دو دلوں کی بارش میں

شـــــــام تھی جدائ کی اور شب قیامت کی
جب اسے کیـــا رخصت آنسوؤں کی بارش میں

دل پـــــــہ زخم ہے کوئی روح میں اداسی ہے
کتنے درد جاگے ہیں سسکیوں کی بارش میں

شہر ِ کج نگاہاں میں کون خوش نظر نکلا
پھول کس نے پھینکا ہے پتّھروں کی بارش میں

بـــــــرق سی لپکتی تھی ، روشنی نکلتی تھی
رات کے اندھیرے سے ان دنوں کی بارش میں

ہم تو خیر ایسے تھے، راستے میں بیٹھے تھے
تم کہاں سے آ نکلے اس غموں کی بارش میں

کــــر چیاں سمیٹیں اب زخم زخم پوروں سے
کچھ نہیں بچا فوزی پتھــــروں کی بارش میں

Click to View the full poetry article at (fundayforum.com)

Sign in to follow this  


0 Comments


Recommended Comments

There are no comments to display.

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now