Sign in to follow this  
  • entries
    438
  • comments
    2
  • views
    26,829

نہ سکوں نہ بے قراری

نہ سکوں نہ بے قراری نہ سکت ھے ضبطِ غم کی ، نہ مجالِ اشکباری
یہ عجیب کیفیت ہے ... نہ سکوں نہ بے قراری

یہ قدم قدم بلائیں ......... یہ سوادِ کوئے جاناں
وہ یہیں سے لوٹ جائے، جسے زندگی ھو پیاری

میری آنکھ منتظر ھے ..... کسی اور صبحِِ نو کی
یہ سحر تمہیں مبارک ، جو ھے ظلمتوں کی ماری

وھی پھول چاک دامن ، وھی رنگِ اھلِ گلشن
ابھی صرف یہ ھوا ھے ..... کہ بدل گئے شکاری

تیرے جاں فراز وعدے، مجھے کب فریب دیتے
تیرے کام آ گئی ھے ........ میری زود اعتباری

تیرا ایک ھی کرم ھے، تیرے ھر ستم پہ بھاری
غمِ دوجہاں سے تُو نے مجھے بخشی رُستگاری

جو غنی ھو ما سِوا سے ، وہ “گدا ” گدا نہیں ھے
جو اسیرِ ما سِوا ھے ، وہ غنی بھی ھے بھکاری

Click to View the full poetry article at (fundayforum.com)

Sign in to follow this  


0 Comments


Recommended Comments

There are no comments to display.

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now