Sign in to follow this  
  • entries
    438
  • comments
    2
  • views
    26,829

کسی راکھ میں ہے دبا ہوا

کسی راکھ میں ہے دبا ہوا کسی شب وہ آئے جو خواب میں
اسے درد سارے ہی سونپ دوں
اسے کہہ سکوں وہ شکایتیں
جسے لہر ِ موج ِ فراق نے
تہہ ِ آب کب سے دبا دیا

یہ فصیل ِ جاں پہ سکوت سا
مجھے کھا رہا ھے کتر کتر
مرے بے خبر تجھے کیا پتا
مری سانس سے ترے درد کا
جو ہے ایک رشتہ بندھا ہوا
یہ چراغ زد میں ہواؤں کی
کسی طاق میں ہے دھرا ہوا
جو تھا خواب مری حیات کا
کسی راکھ میں ہے دبا ہوا

کسی شب تو آ مرے خواب میں
مرے ہمسفر ذرا دیکھ لے
مری شب گزیدہ نگاہ میں
تیرے بعد درد ہی رہ گئے
مری شاخ ٹوٹی ھے سوکھ کر
مرے پھول زرد ہی رہ گئے
کسی شب تو آ مرے خواب میں
مرے ہمسفر مجھے دیکھنے

Click to View the full poetry article at (fundayforum.com)

Sign in to follow this  


0 Comments


Recommended Comments

There are no comments to display.

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now