Sign in to follow this  
  • entries
    438
  • comments
    2
  • views
    26,829

تمُ اگر جو پُوچھو نا

تمُ اگر جو پُوچھو نا

تمُ اگر جو پُوچھو نا
مجھ سے یہ کہ کیا ہو تم
میں کہوں گی تم جانان
آسْمانِ اُلفَت کا وُہ چَمَکتا تاَرا ہو
رَبّ نے جِس کو چَاہَت سے
پیار سے اُتارا ہو

تمُ اگر جو پوچھو نا کیا دُعا تمہیں دُونگی
میں کہوں گی جاناں کہ
چاند اور سُورج کی
روشنی سے چَمکا کر
پھُولوں سے مُزَیَّن اِک
پیار اور مُحَبَّت کا آَشَیاں تمہارا ہو
اَمن کا گِہوارَہ ہو
اَیسا گھَر تمہارا ہو

تمُ اگر سُنَّناَ چاہو تو تمہیں سُناؤں میں
ایسی دُھن کہ جِس کا سَاز
دِل سے تار لے کر کے
ہَر اِک سُر نِکَھارا ہو
رَقص میں یہ جَہاں ساَرا ہو
تمُ اگر جو ماَنگو تو
اپنی سَانسِیں لے کر میں
نام تیرے کر دوں یوں
آنے والا ہَر اِک دَم بھی فََقط تمہارا ہو
تم اَگر جو دیکھو ناَ
میری نَظروں سے خُود کو
ایَسا گُمان پَاؤ گے
چَندا اور تاروں نے
ان حَسِین نَظَاروں نے
صَدقَہ عِشق کا تیرے ہر گَھڑی اُتَارا ہو

پُوچَھو ایسی حاَلت ہو
تو مجُھے کیسے جَانا
اَوَر۔۔ تیر ا غیَروں کی
اِلتِفاَت گَوَارہ ہو
کیوں نا پاگلوں جیسا
حال پِھر ہمارا ہو

Click to View the full poetry article at (fundayforum.com)

Sign in to follow this  


0 Comments


Recommended Comments

There are no comments to display.

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now