Sign in to follow this  
  • entries
    438
  • comments
    2
  • views
    26,829

کنکروں کے سلسلے میں چھوڑ دوں

کنکروں کے سلسلے میں چھوڑ دوں کنکروں کے سلسلے میں چھوڑ دوں
جھیل پر کچھ دائرے میں چھوڑ دوں بدگمانی رہ گئی ہے درمیاں
عمر بھر کے حوصلے میں چھوڑ دوں آنکھ تو دامن بچا کر آ گئی
دل تمھارے راستے میں چھوڑ دوں روگ یہ دل کا بدن تک آ گیا
سوچتی ہوں اب اسے میں چھوڑ دوں
زندگی ہے وہ ،مری عادت نہیں
کس طرح سے پھر اسے میں چھوڑ دوں
کچھ لکیریں بن رہی ہیں زیست میں
کیا اسے بھی حاشیے میں چھوڑ دوں
کیا کہا !اب ساتھ مشکل ہو گیا
تم کہو تو راستے میں چھوڑ دوں

Click to View the full poetry article at (fundayforum.com)

Sign in to follow this  


0 Comments


Recommended Comments

There are no comments to display.

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now