Sign in to follow this  
  • entries
    438
  • comments
    2
  • views
    26,960

اِک نئے ہجر کا اِمکان مجھے گُھورتا ہے

Sign in to follow this  
WaQaS DaR

371 views

میرے ہر وصل کے دَوران مجھے گُھورتا ہے اِک نئے ہجر کا اِمکان مجھے گُھورتا ہے میرے ہاتھوں سے ہیں وابستہ اُمیدیں اُس کی پُھول گرتے ہیں تو، گُلدان مجھے گُھورتا ہے آئینے میں تو کوئی اور تماشہ ہی نہیں ! میرے جیسا کوئی اِنسان مجھے گُھورتا ہے اب تو یُوں ہے کہ گُھٹن بھی نہیں ہوتی مجھ کو اب تو وحشت میں گریبان مجھے گُھورتا ہے میں تو ساحِل سے بہت دُور کھڑا ہُوں، پِھر بھی! ایسا لگتا ہے کہ طوُ فان مجھے گُھورتا ہے میری تمثیل کے کِردار خَفا ہیں مجھ سے میرے افسانے کا عُنوان مجھے گُھورتا ہے


Click to View the full poetry article at (fundayforum.com)

Sign in to follow this  


0 Comments


Recommended Comments

There are no comments to display.

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now