Sign in to follow this  
  • entries
    437
  • comments
    2
  • views
    23,948

میری زندگی میں بس اک کتاب ہے، اک چراغ ہے

Sign in to follow this  
WaQaS DaR

398 views

میری زندگی میں بس اک کتاب ہے، اک چراغ ہے ایک خواب ہے اور تم ہو میں یہ چاہتا تھا یہ کتاب و خواب کے درمیان جو منزلیں ہیں تمھارے ساتھ بسر کروں یہی کل اثاثہ زندگی ہے اسی کو زادِ سفر کروں کسی اور سمت نظر کروں تو میری دعا میں اثر نہ ہو میرے دل کے جادہٴ خوش خبر پہ بجز تمھارے کبھی کسی کا گزر نہ ہو مگر اس طرح کے تمہیں بھی اسکی خبر نہ ہو اسی احتياط میں ساری عمر گزر گئی وہ جو آرزو تھی کتاب و خواب کے ساتھ تم بھی شریک ہو، وہی مر گئی اسی کشمکش نے کئی سوال اٹھاے ہیں وہ سوال جن کا جواب میری کتاب میں ہے نہ خواب میں مرے دل کے جادہٴ خوش خبر کے رفیق تم ہی بتاؤ پھر کے یہ كاروبارِ حیات کس کے حساب میں مری زندگی میں بس اک کتاب ہے اک چراغ ہے اک خواب ہے اور تم ہو (شاعر: افتخار عارف)


Click to View the full poetry article at (fundayforum.com)

Sign in to follow this  


0 Comments


Recommended Comments

There are no comments to display.

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now