Sign in to follow this  
  • entries
    452
  • comments
    3
  • views
    32,903

حالتِ حال کے سبب، حالتِ حال ہی گئی

Sign in to follow this  
WaQaS DaR

598 views

حالتِ حال کے سبب، حالتِ حال ہی گئی شوق میں کچھ نہیں گیا، شوق کی زندگی گئی ایک ہی حادثہ تو ہے، اور وہ یہ کہ آج تک بات نہیں کہی گئی، بات نہیں سنی گئی بعد بھی تیرے جانِ جاں، دل میں رہا عجب سماں یاد رہی تری یہاں، پھر تری یاد بھی گئی صحنِ خیالِ یار میں، کی نہ بسر شبِ فراق جب سے وہ چاندنہ گیا، جب سے وہ چاندنی گئی اس کے بدن کو دی نمود، ہم نے سخن میں اور پھر اس کے بدن کے واسطے، ایک قبا بھی سی گئی اس کی امیدِ ناز کا، ہم سے یہ مان تھا کہ آپ عمر گزار دیجیے، عمر گزار دی گئی اس کے وصال کے لیے، اپنے کمال کے لیے حالتِ دل کہ تھی خراب، اور خراب کی گئی تیرا فراق جانِ جاں، عیش تھا کیا مرے لیے یعنی ترے فراق میں، خوب شراب پی گئی اس کی گلی سے اٹھ کے میں، آن پڑا تھا اپنے گھر ایک گلی کی بات تھی، اور گلی گلی گئی جون ایلیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


Click to View the full poetry article at (fundayforum.com)

Sign in to follow this  


0 Comments


Recommended Comments

There are no comments to display.

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now